سوات(سوات پوسٹ ڈاٹ کام) ملک بھر میں جاری شدید سردی کی لہر کے پیش نظروالدین بچوں کو موسمی امراض کے علاوہ دیگر ہر قسم کی بیماریوں سے محفوظ رکھنے کیلئے مناسب ماحول اور بروقت علاج پر بھرپور توجہ دیں بچوں کی پیدائش سے قبل اور بعد کے حفاظتی ٹیکے ضروری ہیں بچوں کو حفاظتی ٹیکہ جات لگانے میں غفلت نہ برتی جائے بلکہ قریبی صحت مراکز سے فوری رجوع کرتے ہوئے پھول بچوں کا خطرناک بیماریوں سے بچاؤ یقینی بنایا جائے اس سلسلے میں صوبائی حکومت کی فراہم کردہ سہولیات سے بھی پورا فائدہ اٹھایا جائے ان خیالات کا اظہار معروف چلڈرن سپیشلسٹ اور ہیڈ آف دی پیڈیاٹرک ڈیپارٹمنٹ سیدو گروپ ہسپتال پروفیسر ڈاکٹر احسان الحق نے پختونخوا ریڈیو سوات کے پروگرام ’’حال احوال‘‘ میں بچوں کے امراض کے مختلف سوالات کے جوابات دیتے ہوئے کیا ڈاکٹر احسان کا کہنا تھا کہ بچوں کو طبی سہولیات کی فراہمی کے سلسلے میں موجودہ حکومت نے انقلابی اقدامات کئے ہیں جن کی بدولت اب ہر علاقے کے صحت مراکز میں بچوں کو امراض سے بچاؤ کیلئے بہترین سہولیات مہیا کی جاتی ہیں ان سے مناسب استفادہ کرنا والدین کی بنیادی ذمہ داری ہے انہوں نے کہا کہ پیدائش سے قبل زچہ و بچہ دونوں کیلئے تشنج سے بچاؤ کے ٹیکے ضروری ہوتے ہیں جبکہ پیدائش کے بعد بھی حفاظتی ٹیکہ جات کا سلسلہ جاری رکھنا چاہئے اس کے علاوہ پیدائش کے فوری بعد بچے کیلئے ماں کا دودھ ناگزیر اہمیت رکھتا ہے جس کا کوئی نعم البدل نہیں اس حوالے سے پائے جانے والے تمام خدشات قطعی بے بنیاد ہیں جن سے احتراز کرتے ہوئے بچوں کی بہتر صحت کی خاطر انہیں پہلے ماں کا دودھ پلانا چاہئے انہوں نے انکشاف کیا کہ موجودہ پیچیدگیوں سے قبل بچوں کی بیماریاں چھ شمار کی جاتی تھیں جو اب بڑھ کر 9 ہوگئی ہیں موسمی بیماریوں کا ذکر کرتے ہوئے ڈاکٹر احسان الحق نے کہا کہ گرمیوں میں بخار ،قے اور دست کی بیماریاں عام ہوتی ہیں جبکہ سردی کے موسم میں بچوں کو سینے کی بیماریاں اور نمونیہ لگنے کا زیادہ خطرہ رہتا ہے جس کیلئے سب سے پہلے مناسب ماحول کا ہونا ضروری ہے بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے کے حوالے سے بعض والدین کے تحفظات پر ان کا کہنا تھا کہ پولیو ویکیسن کے بارے میں پائے جانے والے خدشات بالکل بے بنیاد ہیں اس میں کوئی مضر صحت چیز شامل نہیں لہذا والدین اپنے بچوں کو عمر بھر کی معذوری سے بچانے کیلئے پولیو ویکسین ضرور پلائیں ڈاکٹر احسان الحق کا مزید کہنا تھا کہ سیدوگروپ ہسپتال انتظامیہ کی مخلصانہ کاوشوں کے نتیجے میں پنجاب کے بعد سیدو گروپ اسپتال کو خیبر پختونخوا کے دیگر تمام بڑے اسپتالوں کے مقابلے میں یہ اعزاز حاصل ہے کہ اس میں کینگرو مدر کیئر طریقہ کار کامیابی کے ساتھ متعارف کرایا گیا جس کے تحت قبل از وقت پیدا ہونے والے شیرخوار بچوں کیلئے بہترین طبی سہولیات اور ٹرینڈ عملہ ہر وقت موجود رہتا ہے اور اسکی وجہ سے نوزائدہ بچوں کی اموات کی شرح انتہائی کم ہوگئی ہے پروگرام کے آخر میں انہوں نے والدین پر زور دیا کہ بچوں کی بہتر صحت کیلئے طبی ہدایات پر عمل درآمد یقینی بنائیں تاکہ ایک صحت مند نسل کی پرورش یقینی بنائی جا سکے۔